یہ تتلیاں نہیں مے فلائے ہیں

ترکی کے سائنس دانوں کی  ایک تحقیق کے مطابق  ترکی  میں موجود کیڑوں کی ایک قسم جنہیں تتلیاں سمجھا جاتا تھا وہ دراصل مےفلائے  گروپ سے تعلق رکھتی ہے۔

مے فلائے ہر سال صوبہ اردھان میں دریائے کورہ کے قریب پائے جاتے ہیں۔

کیڑوں کی ماہر اور تحقیقی ٹیم کی ممبر فیزا خان کا کہنا ہے کہ ہم نے اپنی تحقیق کے درمیان اس بات کا فیصلہ کیا ہے کہ  یہ کیڑئے تتلیاں نہیں بلکہ مے فلائے ہیں۔

مے فلائے گیلے علاقوں کے قریب پائے جاتے ہیں اور انکی زندگی بہت کم ہو تی ہے۔

Read Previous

28 ستمبر: قابض اسرائیلی فوج کے خلاف فلسطینیوں کی دوسری مزاحمتی تحریک (انتفادہ) کا آغاز

Read Next

آرمینیا کی فوج شہری آبادی پر حملے کر رہی ہے، آذربائیجانی سفیر علی علیزادہ

Leave a Reply