اسلام کا احترام کرنے اور دہشت گرد گروپوں کی حمایت ختم کیے بغیر سویڈن نیٹو کی رکنیت کا خواب چھوڑ دے، صدر ایردوان

ترک صدر ایردوان کا کہنا تھا کہ اسلام کے لیے احترام کا مظاہرہ کرنے اور دہشت گرد گروہوں کے خلاف کریک ڈاؤن کے طریقہ کار کو تبدیل کیے بغیر، سویڈن کو نیٹو کی بولی پر ترکیہ سے کسی بھی اچھی خبر کی توقع نہیں رکھنی چاہیے۔

صدر ایردوان نے دارالحکومت انقرہ میں کابینہ کے اجلاس کے بعد کہا ہے کہ جن لوگوں نے ہمارے سفارت خانے کے سامنے اس طرح کی حرکت کی ہے، انہیں اپنی نیٹو کی رکنیت کی درخواستوں پر ہم سے کسی قسم کے احسان کی توقع نہیں رکھنی چاہیے۔

ایردوان کا یہ نکتہ اعتراض ڈنمارک کے ایک انتہائی دائیں بازو کے سیاست دان راسموس پالوڈان کی جانب سے ہفتے کے روز سٹاک ہوم میں ترکیہ کے سفارت خانے کے باہر پولیس کی حفاظت میں اور سویڈش حکومت کی اجازت سے قرآن پاک کے ایک نسخے کو نذر آتش کرنے کے بعد سامنے آیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اگر آپ جمہوریہ ترکیہ یا مسلمانوں کے مذہبی عقائد کا احترام نہیں کرتے ہیں تو آپ کو ہماری طرف سے نیٹو (رکنیت) کے لیے کوئی حمایت حاصل نہیں ہوگی۔

ایردوان نے زور دے کر کہا کہ کسی بھی فرد کو مسلمانوں یا دیگر مذاہب اور عقائد کی توہین کرنے کی آزادی نہیں ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سویڈن میں گھناؤنا اقدام ہر اس شخص کی توہین ہے جو لوگوں کے بنیادی حقوق اور آزادیوں کا احترام کرتا ہے، خاص طور پر مسلمانوں کا۔

انکا کہنا تھا کہ اگر وہ دہشت گرد تنظیم کے ارکان اور اسلام کے دشمنوں سے اتنی ہی محبت کرتے ہیں تو ہم انہیں مشورہ دیتے ہیں کہ وہ اپنے ملک کا دفاع ان کے سپرد کریں۔

Read Previous

انقرہ ٹیکارت اوداسی کے صدر کی پاکستانی سفیر سے ملاقات

Read Next

ترکیہ میں صدارتی اور پارلیمانی انتخابات 14 مئی 2023 کو ہونگے،صدر ایردوان

Leave a Reply