fbpx

اپوزیشن لیڈر شہباز شریف میں کورونا وائرس کی مثبت تشحیص

جمعرات کو پاکستان کے حزب اختلاف کے مرکزی رہنما شہباز شریف میں ناول کورونا وائرس کی تشحیص ، ان کے اہل خانہ اور پارٹی نے جمعرات کو اس بات کی تصدیق کی

مسلم لیگ ن [پاکستان مسلم لیگ نواز] کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف میں کورونا وائرس کی تشحیص۔ انہوں نے گھر میں خود کو قرنطینہ کرلیا۔ پارٹی کی ترجمعان مریم اورنگزیب نے ٹویٹر پیغام میں کہا۔

ان کے وکیل عطا اللہ تارڑ نے بتایا کہ 68 سالہ شریف کینسر سروائیور ہیں اور ان کا مدافعتی نظام کمزور ہے ، انہوں نے مزید کہا کہ وہ 9 جون کو بدعنوانی کیس میں  قومی احتساب بیورو کے سامنے پیش ہوئے۔ صوبہ پنجاب کے سابق وزیر اعلی پر ہاؤسنگ اسکیم میں بدعنوانی کا الزام ہے ۔

لاہور میں شریف کے بیٹے حمزہ شہباز نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا، "یہ مشکل وقت ہے ، اللہ سب کے والدین کی حفاظت کرے”۔

سابقہ ​​حکمران جماعت کے دیگر اعلی قائدین جو متاثرہ ہیں ان میں سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور جنرل سکریٹری احسن اقبال شامل ہیں۔

وزیر ریلوے شیخ رشید احمد بھی وائرس کا شکار ہوگئے ہیں۔ سائنس اور ٹکنالوجی کے وزیر فواد چوہدری نے کہا کہ 342 رکنی قومی اسمبلی میں سے تقریبا ایک تہائی ارکان پارلیمنٹ یا تو متاثر ہیں یا اس وائرس کا شکار ہونے کا شبہ ہے۔

انہوں نے اناڈولو ایجنسی کو بتایا ، "ہاں  یہ سنجیدہ بات ہے۔ اگرچی ایک تہائی نہیں لیکن ہم اس کے قریب ہیں۔” "میں نے ایک ورچول اجلاس طلب کرنے کا مشورہ دیا تھا لیکن اپوزیشن نے اس پر اتفاق نہیں کیا اور اب مسلم لیگ ن کی تقریبا پوری قیادت کورونا+ ہے۔

جنوب مشرقی صوبہ سندھ کے گورنر عمران اسماعیل اور پارلیمنٹ کے اسپیکر اسد قیصر میں بھی وائرس کی مثبت تشحیص ہوئی لیکن وہ صحت یاب ہوچکے ہیں۔

گذشتہ ماہ وزیر اعظم عمران خان کا لاک ڈاؤن کو کم کرنے کے بعد سے پاکستان میں انفیکشن کیسز میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

عالمی ادارہ صحت نے افغانستان کے بعد پاکستان کو سب سے زیادہ خطرے میں قرار دیا۔

رواں ہفتے کے شروع میں حکومت کو لکھے گئے خط میں ، اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسی نے بڑھتی ہوئی وبا کو روکنے کے لئے دو ہفتوں کے لیے سخت لاک ڈاون کا مشورہ دیا۔

جس کے جواب میں ، مشیر صحت ظفر مرزا نے کہا کہ انہوں نے ملک کی عوام کے مفاد میں فیصلے کیے ہیں۔ یہاں تک کہ وزیر اعظم نے سخت لاک ڈاؤن کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ترقی پذیر معیشتوں کا "سمارٹ لاک ڈاؤن” ہی واحد حل ہے۔

ملک کی وزارت صحت نے گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 834، 5 وائرس کیسز رپورٹ کیے ، جس کے بعد کل کیسز کی تعداد 119،536 ہوچکی ہے ، جن میں 2،356 اموات اور 38،391 صحت یاب ہونے والے افراد شامل ہیں۔

ozIstanbul

پچھلا پڑھیں

غریب ممالک کورونا وائرس کی ویکسین کی جلد دستیابی کی امید نہ رکھیں، ورلڈ اکنامک فورم

اگلا پڑھیں

تُرکی سے بین الاقوامی پروازیں اڑنا شروع ہو گئیں

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے