فن لینڈ کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ترکیہ کی مدد کرنی چاہیے ، حلوصی آقار

ترک وزیر دفاع حلوصی آقار کی فن لینڈ کے ہم منصب سے انقرہ میں ملاقات سے ملاقات کی۔  ملاقات کے بعد مشترکہ کانفرنس کرتےہوئے کہا کہ ترکیہ اپنے تمام اتحادیوں خصوصاً فن لینڈ سے یہ توقع رکھتا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ترکیہ کا بھرپور ساتھ دی جائے گی، اور ترکیہ کی فوج کو جدید بنانے کی کوششوں میں تعاون کیا جائے گا۔

حلوصی آقار نے فن لینڈ کے ہم منصب کے دورے سے پہلے اپنے خطاب میں کہا کہ "نیٹو نے اپنی پالیسی "اوپن ڈور” کے تحت سیکورٹی معاملات میں ترکیہ کے اتحادی ممالک جو ملکی سلامتی میں حصہ ڈال سکتے ہیں ان کی توسیع کے تصور کو آگے بڑھایا ہے۔” یہ بھی کہا گیا ہے کہ ترکیہ توقع کر رہا ہے کہ نیٹو اور جو لوگ اس میں شامل ہونا چاہتے ہیں ان کی طرف سے اس حساسیت کا احترام کیا جانا چاہیے۔
چونکہ نیٹو ایک سیکورٹی تنطیم ہے اور اس کی سب سے بڑی جنگ دہشت گردی کے خلاف ہے ۔ دہشت گردی تمام ممالک کا سنگین مسئلہ ہے اور ترکیہ ایک ایسا ملک ہے جو متعدد دہشت گرد تنظیم کے خلاف لڑ رہا ہے اور اس پر تمام ممالک کو نظر ڈالنی چاہیے اور اس کے بارے میں آگاہی کو آگے بڑھانا چاہیے۔ ترک وزیر خارجہ مہلوت چاوش اوغلو نے بھی کہا کہ ترکیہ نے فن لینڈ سے مطالبہ کیا کہ غیر ذمہ دار طبقات کو اسلحہ کی فروخت ختم کی جائے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ فن لینڈ ہمارے اس مطالبہ پر جلد کوئی فیصلہ لے گا۔
خیال رہے کہ فن لینڈ اور سویڈن نے یوکرین پر حملے کے بعد نیٹو میں شمولیت کے لیے درخواست دی تھی۔ لیکن ترکیہ نے سیکورٹی خدشات کے باعث فن لینڈ اور سویڈن کے نیٹو شمولیت پر اعتراض کیا تھا
ترکیہ ، سویڈن اور فن لینڈ نے جون کے آخر میں نیٹو کی میڈرڈ سمٹ کے دوران دو نورڈک ریاستوں کے اتحاد میں شامل ہونے کے بارے میں ایک سہ فریقی یادداشت پر دستخط کیے تھے۔

Read Previous

کروز بحری جہاز کے ذریعے 30 ہزار سیاح انطالیہ آئے

Read Next

ترک زبان سیکھیے: درخواستیں جمع کروانے کی آخری تاریخ 21 دسمبر

Leave a Reply