fbpx

مصری عدالت کا اخوان المسلمین کے 89 رہنماوٗں کے اثاثے ضبط کرنے کا حکم

مصر کی ایک عدالت نے اخوان المسلمین کے 89 رہنماوٗں کے اثاثے ضبط کر کے حکومت کی تحویل میں دینے کا حکم جاری کیا ہے۔ جن رہنماوٗں کے اثاثے ضبط کرنے کا حکم جاری کیا گیا ہے ان میں مصر کے سابق منتخب صدر مرحوم محمد مرثی بھی شامل ہیں۔ عدالت نے کہا ہے کہ محمد مرثی کے اہل خانہ کے اثاثے ضبط کر کے انہیں قومی تحویل میں لے لیا جائے۔

جن رہنماوٗں نے اثاثے ضبط کرنے کا حکم جاری کیا گیا ان میں اخوان المسلمین کے سپریم لیڈر محمد باری، ان کے نائب خیرات الشطیر، محمد بلتغے، عبدالرحمان البدر، احمد زیاب، محمد مرثی کی کابینہ کے دو وزیروں اوسامہ یاسین اور باسم عودہ شامل ہیں۔

مصر کی حکومت نے عدالت کے فیصلے پر عمل کرتے ہوئے ایک کمیشن قائم کر دیا ہے جو اخوان المسلمین کے رہنماوٗں کے اثاثے ضبط کرنے کی کارروائی مکمل کر کے اس کی رپورٹ عدالت میں جمع کرائے گا۔ کمیشن نے مصر کے مرکزی بینک اور لینڈ رجسٹری سے کہا ہے کہ جن رہنماوٗں کے اثاثے ضبط کرنے کا حکم عدالت نے دیا ہے ان کے اثاثے قومی خزانے میں جمع کروا دیئے جائیں۔

مصر کی حکومت 2014 سے اخوان المسلمین کے خلاف کارروائیاں کر رہی ہے۔ واضح رہے کہ اخوان المسلمین نے 2012 میں عام انتخابات میں کامیابی حاصل کی تھی اور تنظیم کی طرف سے محمد مرثی مصر کے صدر منتخب کئے گئے تھے۔ 2013 میں اس وقت کے مصری فوج کے سربراہ عبدالفتح السیسی نے منتخب صدر محمد مرثی کی حکومت کا تختہ الٹ کر اقتدار پر قبضہ کر لیا تھا۔

ozIstanbul

پچھلا پڑھیں

یو اے ای نے اسرائیل کے ساتھ ویزہ فری معاہدہ معطل کر دیا

اگلا پڑھیں

ترکی اردو ویب سائٹ کا باقاعدہ آغاز ، تقریب میں ترک سفیر احسان مصطفیٰ یردکل اور وفاقی وزیر شہریار آفریدی کی شرکت

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے