عبدالحمید خان بحری جہاز تیل و گیس کی تلاش کے لئے روانہ

ترک انجینئرز کا ایک اور بڑا کارنامہ، تیل و گیس کی تلاش کے لئے جدید ترین بحری جہاز تیار کر لیا، صدر طیب ایردوان نے "یا اللہ ،بسم اللہ ” کہہ کر جہاز کو ذخیرے کی تلاش کیلئے روانہ کیا ۔

عبدالحمید خان سیونتھ جنریشن بحری جہاز کو مشرقی بحیرہ روم میں تیل و گیس کی تلاش کے لئے خصوصِ طور پر تیار کیا گیا ہے
مرسین کی بندرگاہ سے عبدالحمید خان بحری جہاز کو تیل و گیس کی تلاش کے لئے روانہ کیا گیا، اس خصوصی تقریب میں صدر ایردوان نے بھی شرکت کی،
جہاز مشرقی بحیرہ روم میں، صدر رجب طیب ایردوان کے اعلان کردہ علاقے میں، 7 اکتوبر تک فرائض سرانجام دیتا رہے گا۔

عبدالحمید خان ڈرلنگ بحری جہاز یورک لر۔1 فیلڈ میں فرائض سرانجام دے گا اور اس دوران خاقان الہان، قدسی الہان اور مراد الہان نامی بحری جہاز اس کی معاونت کریں گے۔

صدر رجب طیب ایردوان نے بحیرہ روم میں قدرتی وسائل کی تلاش سے متعلق کہا کہ بحیرہ روم میں قدرتی وسائل کی تلاش کا کام ہماری سرحدوں کے اندر ہو رہا ہے۔ جس کے لیے ہمیں کسی سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں۔
تقریب میں اپنے خطاب میں صدر ایردوان نے کہا کہ "ہمارا عبدالحمید خان ڈرلنگ جہاز توانائی کے شعبے میں ترکی کے نئے وژن کی علامت ہے۔ اب ہم اپنے 4 ڈرلنگ جہازوں اور 2 زلزلہ تحقیقی جہازوں کے ساتھ اس علاقے میں کام کر رہے ہیں ۔”
یہ بتاتے ہوئے کہ وہ بحیرہ اسود کی قدرتی گیس کو اگلے سال قوم کے استعمال کے لیے پیش کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں صدر ایردوان نے کہا، "ہم بحیرہ اسود کی گیس کے پہلے مرحلے کے لیے درکار 10 کنوؤں میں کام مکمل کرنے اور یہاں سے 2023 میں اپنی قوم کی خدمت میں پیش کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں ۔”
بحیرہ روم میں کھدائی کی جانے والی سرگرمیوں کے بارے میں صدر ایردوان نے کہا کہ "بحیرہ روم میں تلاش اور ڈرلنگ کی سرگرمیاں ہمارے دائرہ اختیار میں ہیں۔ ہمیں اس کے لیے کسی سے اجازت یا منظوری کی ضرورت نہیں ہے۔”


وزیر توانائی فاتح دونمیز نے جہاز کے بارے تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ مشرقی بحیرہ روم میں تیل اور گیس کے سابقہ اعداد و شمار اور سیسمک ریکارڈ کی تصدیق کے لئے سیونتھ جنریشن بحری جہاز بھیجا گیا ہے
اس وقت بحیرہ اسود میں ترکیہ کے دو ڈرل شِپس قانونی اور یوواز پہلے ہی ڈرلنگ کے کام میں مصروف ہیں،
ترکیہ کے چار بحری جہاز بیک وقت مشرقی بحیرہ روم اور بحیرہ اسود میں تیل اور گیس کی تلاش کا کام جاری رکھے ہوئے ہیں
آئندہ سال بحیرہ اسود میں سکاریا فیلڈ سے گیس کی فراہمی شروع ہو جائے گی جس کے بعد ترکیہ کا درآمدی گیس پر انحصار کچھ کم ہو جائے گا،،
ترکیہ اپنی گیس کی 40 فیصد ضروریات روس سے امپورٹ کر کے پورا کر رہا ہے،،
نئی گیس کی تلاش کے بعد ترکیہ روسی گیس کو خدا حافظ کہنے کی پوزیشن میں آ جائے گا،،
بحیرہ اسود کی سکاریہ فیلڈ سے گیس گھریلو صارفین تک پہنچانے کے لئے مختصر مدت میں ترک انجینئرز نے بڑا کارنامہ انجام دیا ہے،
انجینئرز نے سمندر کے اندر 170 کلومیٹر پائپ لائن بچھانے کا کام مکمل کر لیا ہے،،اب صرف پانچ کلو میٹر طویل پائپ لائن بچھانے کا کام جاری ہے جو اسی سال مکمل ہو جائے گا،،
سکاریہ فیلڈ سے گھریلو اور صنعتی صارفین کو گیس کی فراہمی آئندہ سال کے وسط تک شروع ہو جائے گی۔

Read Previous

پاکستانی ایتھلیٹ ارشد ندیم کامن ویلتھ گیمز میں گولڈ میڈل جیتنے میں کامیاب

Read Next

برمنگھم میں جاری کامن ویلتھ گیمز اختتام پذیر

Leave a Reply