turky-urdu-logo

صدر ایردوان کا 14ویں سالانہ ترک سفارتکاروں کی کانفرنس سے خطاب

صدر ایردوان کا کہنا ہے کہ ترکیہ، جو کہ جغرافیائی طور پر ایک اہم مقام پر واقع ملک ہے اسکے لیے مضبوط سفارت کاری کا ہونا ضروری ہے۔

صدر ایردوان نے بیرون ملک خدمات انجام دینے والے ترک سفیروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تین براعظموں کے مرکز میں واقع، ترکیہ صرف ترقی کرنے کے بارے میں سوچنے والوں میں سے نہیں ہو سکتا بلکہ اسے عملی شکل پہنانا بھی ضروری ہے۔

میدان میں اور میز پر مضبوط ہونا ہمارے لیے کوئی آپشن نہیں ہے بلکہ یہ ہمارا فرض ہے۔

ترک سفیر 14ویں سالانہ ترک سفارتکاروں کی کانفرنس کے لیے دارالحکومت انقرہ میں علاقائی اور بین الاقوامی پیش رفت، عالمی رجحانات اور حالیہ چیلنجز اور مواقع پر تبادلہ خیال کے لیے جمع ہوئے۔

صدر ایردوان  نے کہا کہ ہم سفارت کاری کے تمام آلات اور طاقت کے تمام عناصر کو استعمال کرتے ہوئے ترکیہ کے مفادات کے تحفظ کے لیے کوشاں ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ترکیہ ایک "پلے میکر ملک” بن گیا ہے جس نے بین الاقوامی تعلقات پر اپنا نشان چھوڑا ہے، جس کی شمولیت بہت سے اہم معاملات میں تلاش کی جاتی ہے، اور جس کے رویے کی قریب سے پیروی کی جاتی ہے۔

دہشت گردی

دہشت گردی کے خلاف جنگ کی طرف رجوع کرتے ہوئے، صدر ایردوان نے کہا کہ ترکیہ نے دہشت گرد گروپوں بشمول ASALA اور PKK کے سامنے ایک قدم پیچھے نہیں ہٹایا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اپنی آزادی اور مستقبل کو داغدار نہیں کیا۔

صدر ایردوان نے کہا کہ ترکیہ کی کارروائیاں اس وقت تک جاری رہیں گی جب تک وہ "دہشت گردی کی لعنت” کو ختم نہیں کر دیتے، جو ترکیہ کے ساتھ ساتھ عراق کی علاقائی سالمیت کے لیے بھی خطرہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ترکیہ میں شامی پناہ گزینوں کی رضاکارانہ واپسی کو ان کے ملک میں تیز کیا جائے گا جس  سے عراق اور شام میں استحکام آئے گا۔

ترکیہ میں اس وقت 3.7 ملین سے زیادہ شامی باشندے مقیم ہیں، جو اسے پناہ گزینوں کی میزبانی کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک بناتا ہے۔

بحیرہ اسود کا اناج

صدر ایردوان نے کہا کہ ترکیہ، روس-یوکرین کے بحران کے حل میں  ایک اہم ملک ہے۔

انہوں نے کہا کہ انقرہ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے پہلے دن سے ہی "متوازن اور منصفانہ” رویہ پر عمل پیرا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بحیرہ اسود کے اناج کے معاہدے کی بحالی کے لیے فریقین کے ساتھ انقرہ کی بات چیت جاری ہے۔

روسی صدر ولادیمیر پیوتن کے ساتھ اپنی حالیہ فون کال کے بارے میں بات کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ انہیں روس کے مطالبات اور توقعات کے بارے میں دوبارہ معلومات حاصل کرنے کا موقع ملا۔

انکا کہنا تھا کہ پیوتن، ہماری طرح، اناج کی مصنوعات تک اپنے افریقی بھائیوں کی رسائی کے بارے میں حساس ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ ہم اس معاملے پر مشترکہ حل تلاش کر سکتے ہیں۔

17 جولائی کو، روس نے اس معاہدے میں اپنی شرکت کو معطل کر دیا، جس پر اس نے جولائی 2022 میں ترکیہ، اقوام متحدہ اور یوکرین کے ساتھ یوکرین کے بحیرہ اسود کی بندرگاہوں سے اناج کی برآمدات دوبارہ شروع کرنے کے لیے دستخط کیے تھے جو کہ گزشتہ سال فروری میں روس-یوکرین جنگ شروع ہونے کے بعد روک دی گئی تھیں۔ . ماسکو نے شکایت کی ہے کہ معاہدے کے روسی حصے پر عمل درآمد نہیں ہو رہا۔

صدر ایردوان نے زور دے کر کہا کہ بلاشبہ اس مسئلے کا حل مزید تعطل کے بغیر مغربی ممالک کے اپنے وعدوں کو پورا کرنے پر منحصر ہے۔

یوکرین اور روس کے درمیان ثالثی کے منفرد کردار کے لیے بین الاقوامی سطح پر سراہنے والے ترکیہ نے کیف اور ماسکو سے بارہا مطالبہ کیا ہے کہ وہ مذاکرات کے ذریعے جنگ کو ختم کریں۔

اسلامو فوبیا کے خلاف جنگ

کچھ مغربی ممالک میں حالیہ اشتعال انگیز کارروائیوں اور مسلمانوں کی مقدس کتاب قرآن مجید کے نسخوں کو نذر آتش کرنے پر، صدر ایردوان نے کہا ہے کہ ترکیہ اسلامو فوبیا کے خلاف اپنی لڑائی جاری رکھے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں اسلامو فوبیا سے نمٹنے کے لیے مزید کوششیں کرنے کی ضرورت ہے، جو کہ حالیہ ہفتوں میں بعض یورپی ریاستوں میں ناقابل برداشت حد تک پہنچ چکی ہے۔

اسلاموفوبک شخصیات یا گروہوں نے حالیہ مہینوں میں شمالی یورپ میں قرآن کو نذرآتش کرنے اور  بے حرمتی کی متعدد کوششیں کی ہیں، جس سے مسلم ممالک اور پوری دنیا میں غم و غصہ پایا جاتا ہے۔

قرآن پر حملوں کو روکنا اور اس بات کو یقینی بنانا کہ ان نفرت انگیز جرائم کے مرتکب افراد کو اس طرح سزا دی جائے جس کے وہ مستحق ہیں۔

صدر ایردوان نے مزید کہا کہ  ہم ان ممالک میں سے ایک بن گئے جنہوں نے اس بربریت کا سب سے مضبوط اور موثر جواب دیا ہے، جس سے ممالک دن بہ دن مزید لاپرواہ ہوتے جا رہے ہیں۔

اس کے علاوہ، انہوں نے کہا کہ ترکیہ تمام بین الاقوامی تنظیموں کو متحرک کرنے کی کوشش کرتا ہے جن کا وہ اس سلسلے میں رکن ہے۔

انہوں نے زور دیا کہ ترکیہ اس جدوجہد کو آگے بڑھانے کی اپنی ذمہ داری کو پووری کرے گا، جیسا کہ وہ صدیوں سے کرتا رہا ہے۔۔

امن اور استحکام کا علاقہ

صدر ایردوان نے کہا کہ انقرہ کا مقصد اپنے ارد گرد امن، استحکام اور خوشحالی کا ایک خطہ قائم کرنا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ اس مقصد کے حصول کے لیے بات چیت اور سفارت کاری سب سے اہم ہتھیار ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ  ہم اپنے دوستوں کی تعداد میں مزید اضافہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ہمارا کسی کے ساتھ، خاص طور پر اپنے پڑوسیوں کے ساتھ کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

صدر نے یہ بھی کہا کہ ترکیہ کے پاس دنیا کے پانچ بڑے سفارتی نیٹ ورکس میں سے ایک ہے جس کے 260 نمائندے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے اپنی خارجہ پالیسی کے افق کو پوری دنیا کا احاطہ کرنے کے لیے وسیع کیا ہے۔ ہم نے افریقہ، لاطینی امریکہ اور ایشیا جیسے کئی سالوں سے نظر انداز کیے گئے خطوں پر توجہ مرکوز کرکے اپنے تعلقات کو مضبوط کیا ہے۔

 

واضح رہے کہ 14ویں سالانہ ترک سفارتکاروں کی کانفرنس دارالحکومت انقرہ میں شروع ہوئی جس میں بیرون ملک اور اندرون ملک خدمات انجام دینے والے ترک سفیروں نے شرکت کی۔

"ترکیہ کی صدی میں ہماری خارجہ پالیسی” کے موضوع کے تحت یہ کانفرنس منعقد ہوئی۔

یہ کانفرنس 2008 سے ترک وزارت خارجہ کی طرف سے ہر سال منعقد کی جاتی ہے، جہاں سفیر علاقائی اور عالمی پیش رفت پر تبادلہ خیال کرتے ہیں۔

یہ کانفرنس خارجہ پالیسی کی اندرون ملک منصوبہ بندی اور بین ادارہ جاتی ہم آہنگی کے لیے اہم کردار ادا کرتی ہے۔

Alkhidmat

Read Previous

ترکیہ کی بائکار کمپنی کا سعودی عرب کے ساتھ جنگی ڈرون آکنجی کی مشترکہ تیاری کا معاہدہ

Read Next

صدر ایردوان کی انٹر نیشنل یونین آف مسلم سکالرز کے وفد سے ملاقات

Leave a Reply