ہمیں امید ہے کہ روس اور یوکرین اناج کےمعاہدے پر عمل کریں گے،صدر ایردوان

ترکیہ کے صدر رجب طیب ایردوان نے اناج کی بر آمد کے معاہدے کے فریقین یعنی روس اور یوکرین سے مطالبہ کیا ہے کہ معاہدے پر عمدر آمد کو یقینی بنایا جائے اور یوکرین کے بحیرہ اسود سے اناج کی بر آمد کیلئے راستے کھولے جائیں۔

یاد رہے کہ  یہ معاہدہ استنبول میں ترکیہ کی میزبانی اور اقوام متحدہ کی ثالثی میں طے کیا گیا تھا۔

صدر ایردوان نے ٹی آر ٹی کے ساتھ انٹرویو میں کہا کہ ہم توقع کرتے ہیں کہ فریقین اپنی ذمہ داریوں کے مطابق کام کریں گے۔

صدر ایردوان نے امید ظاہر کی ہے  کہ اس معاہدے کے نتیجے میں عالمی خوراک کے بحران کے اثرات کم ہو نا شروع ہو جائیں گے۔

اس معاہدے کے مطابق یوکرینی بندرگاہوں اوڈیسا، جرومورسک اور یوزنی کے ذریعے اناج کی بر آمد شروع کی جائے گی اور روس ان بندرگاہوں سے اناج کی تر سیل میں رکاوٹ نہیں بنے گا۔

معاہدے کے تحت بندرگاہوں کے داخلی اور خارجی راستوں کی حفاظت اور نگرانی کو یقینی بنانے کیلئے استنبول میں ایک مشترکہ رابطہ مرکز قائم کیا گیا ہے۔

لیکن معاہدے کے اگلے ہی روز روس نے اوڈیسا پر بمباری کردی جس پر ایروان نے درعمل ظاہر کرتے ہوئے کہاکہ ترکیہ کو اس واقعے کا افسوس ہے اور اگر معاہدہ ناکام ہوا تو اسکا نقصان ہم سب کو ہوگا۔

Read Previous

6 ماہ میں تقریباً 281,000 سیاحوں نے گرم ہوا کے غباروں کے ساتھ آسمان کی سیر کی،ترک وزارت

Read Next

انقرہ: انسٹیٹیوٹ آف اسٹریٹجیک تھنکنگ کے زیر اہتمام یوم استحصال کشمیر کے حوالے سے سیمینار

Leave a Reply