fbpx
ozIstanbul

ترک وزیر خارجہ میلوت چاوش اولو کا تیونس کے وزیر خارجہ سے ٹیلی فونک رابطہ

ترک  وزیر خارجہ میلوت چاوش اولو  نے تیونس  کے وزیر خارجہ  عثمان الجرندی     سے ٹیلی فونک رابطہ  کیا۔

وزارت خارجہ کے مطابق  گفتگو میں  ترک وزیر خارجہ نے تیونس کے عوام سے یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ  ترکی  جمہوریت کا حامی ہے ۔

ان کا کہنا تھا کہ  ترکی تیونس  کے امن و استحکام  کو اہمیت دیتا جو کہ صرف جمہوری نظام  حکومت کے ذریعے ہی ممکن ہے۔

تیونس کے صدر قیس سعید نے  25 جولائی کو ملک میں صدارتی مارشل لا نافذ کردیا جس کے تحت وزیر اعظم کو برطرف کر دیا گیا اور پارلیمنٹ تحلیل کر دی گئی۔ صدر کے اس اقدام کے بعد ملک میں صوتحال کشیدہ ہوتی ہوئی نظر آ رہی ہے۔

پارلیمنٹ کے اسپیکر راشد الغنوشی نے اس فیصلے کو بغاوت قرار دیتے ہوئے کہا کہ” پارلیمنٹ کا اوپن سیشن جاری ہے۔قیس سعید نےجوکیا وہ غلط وغیر قانونی ہے، انقلاب و دستور کےخلاف بغاوت ہے۔ تیونس قوم اور النہضہ کےحامی وکارکنان متحد ہوکر انقلاب کادفاع کریں گے ”

صدر کے اس اعلان کے بعد تونس کے مختلف شہروں میں عوام سٹرکوں پر آگئ ۔ البتہ صدر نے پہلے ہی خبردار کر دیا ہے کہ کسی بھی قسم کی پر تشدد کاروائی کو برادشت نہیں کیا جائے گا بلکه اس کا جواب مسلح فوج کے سپاہی دیں گے۔

پچھلا پڑھیں

پاک بحریہ کے جہاز پی این ایس ذوالفقار روس کے کامیاب دورے کے بعد سینٹ پیٹرزبرگ سے روانہ

اگلا پڑھیں

پاکستان پر سفری پابندیوں میں نرمی پر کام کررہے ہیں، سعودی وزیر خارجہ

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے