fbpx
ozIstanbul

افغانستان میں عالمی طاقتوں کی لڑائی کے نتائج پاکستان اور افغان عوام کو بھگتنے پڑتے ہیں، فواد چوہدری

پاکستان کے وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ ماضی میں پاک افغان تعلقات کی تلخی تاریخ کا جبر تھا۔ پاکستان نے  50 لاکھ سے زائد افغان مہاجرین کی میزبانی کی۔

وہ اسلام آباد میں "پاک افغان میڈیا کنکلویو” سے خطاب کر رہے تھے۔ پاک افغان یوتھ فورم نے دونوں ملکوں کے میڈیا کو قریب لانے کے لئے اس کانفرنس کا اہتمام کیا ہے۔

وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کہا کہ افغانستان میں عالمی طاقتوں کی لڑائی اور مفادات کے نتائج پاک افغان عوام کو برداشت کرنے پڑے ہیں۔ افغانستان میں جنگ کے باعث پاکستان گذشتہ چالیس سال سے لاکھوں افغان مہاجرین کا بوجھ اٹھائے ہوئے ہے۔ مہاجرین کی میزبانی ہمارا احسان نہیں فرض ہے۔

انہوں نے کہا کہ سپر پاورز کی لڑائی میں ہم جیسے ممالک ہمیشہ پِس جاتے ہیں کیونکہ ہمارے پاس عالمی طاقتوں کے مفادات کو روکنے کی اسپیس نہیں ہوتی۔ اگر افغانستان کے حالات دوبارہ خراب ہوتے ہیں تو ایک بار پھر بڑی تعداد میں مہاجرین پاکستان کا رخ کریں گے۔ سپر پاورز  اپنی لڑائی اور اپنے مفادات کو تحفظ دے کر چلی جاتی ہیں جس کے بعد پاکستان اور افغانستان کے عوام کو نتائج بھگتنے پڑتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان افغانستان میں امن چاہتا ہے۔  افغان ہمارے ہی قبائل اور برادی کے لوگ ہیں۔ ہماری ثقافت، تاریخ ایک ہے اور ہم آپس میں شادیاں بھی کرتے ہیں۔

وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کہا کہ افغانستان میں امن سے  گوادر سے ازبکستان تک تجارت بڑھائی جا سکتی ہے۔ ہم بھارت سے بھی اچھے تعلقات چاہتے ہیں ۔ افغانستان کا مسئلہ افغان عوام نے ہی حل کرنا ہے۔ افغان عوام نے ملک کے  آئین پر اتفاق کرنا ہے۔ پاکستان صرف امن کے لئے  سہولتیں پیدا کرسکتا ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کا ویژن غربت کا خاتمہ ہے جو تجارت بڑھنے سے ختم ہوگا اور تجارت کیلیے امن ضروری ہے۔ انہوں نے دونوں ملکوں کے میڈیا کو ایک دوسرے کے قریب آنے اور زیادہ سے زیادہ ثقافتی شو کرنے پر زور دیا۔

فواد چوہدری نے کہا کہ پاکستان افغانستان کے ساتھ مشترکہ فلم اور ڈرامہ سازی پر کام کرنا چاہتا ہے۔

علامہ اقبال، خوشحال خان خٹک کے لئے دونوں ممالک کے عوام میں میں احترام ہے۔

پاک افغان یوتھ فورم کی میڈیا کانفرنس دو روز جاری رہے گی۔ کانفرنس میں دونوں ممالک کے سینئر صحافی، سفارتکار اور اعلیٰ حکام سمیت اراکین پارلیمنٹ بھی شریک ہیں۔

 

پچھلا پڑھیں

پاکستان اور سعودی عرب کا وزارت خارجہ میں فوکل پرسنز تعینات کرنے پر اتفاق

اگلا پڑھیں

پاکستان: اسلام آباد اور راولپنڈی میں مسلسل بارش، سیلاب کے نتیجے میں 2 افراد جاں بحق

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے