fbpx
ozIstanbul

سوشل میڈیا پر موجود غلط معلومات جمہوریت کے لیے خطرہ ہیں: صدرایردوان

ترک صدر رجب طیب ایردوان کا کہنا ہے کہ بغیر کسی معائنے کے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر موجود مواد جمہوریت ، سماجی امن اور ریاستوں کی قومی سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔

صدر ایردوان نے استنبول میں منعقدہ ترک قو نصل میڈیا فارم کو ایک ویڈیو پیغام میں کہا کہ جس طرح ہم دفاعی صنعت اور عسکری معاملات میں مکمل طور پر غیر ملکیوں پر انحصار نہیں کر سکتے بلکل اسی طرح ہی ہم مواصلات کا مسئلہ دوسروں پر نہیں چھوڑ سکتے۔

صدر ایردوان نے ترکی کے ڈائریکٹوریٹ آف کمیونیکشن کے زیر اہتمام تین روزہ میڈیا فورم کے لیے امید ظاہر کی ہے کہ یہ فورم ملکوں کے درمیان یکجہتی کو مضبوط بنانے میں معاون ثابت ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ہم ان لوگوں کے ضمیر اور پیشہ ورانہ اخلاقیات پر بھروسہ نہیں کر سکتے جو ہمیں مشرقی نقطہ نظر سے مسلسل انسانی حقوق ، جمہوریت اور آزادی کا سبق سکھاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں لاکھوں لوگ جھوٹی  خبروں کی وجہ سے افسردہ ہیں اور شدید صدمے کا شکار ہیں۔

صدر ایردوان نے کہا کہ دوسرے اسٹریٹجک مسائل کی طرح ہمیں میڈیا اور مواصلات سے متعلق معاملات کو اپنے ہاتھ میں لینا ہوگا۔

انہوں نے ترک دنیا اور متعلقہ ممالک پر زور دیا کہ وہ اس سلسلے میں پہل کریں ، تجربہ بانٹیں ، افواج میں شامل ہوں ، اور اس موقع کو زیادہ موثر طریقے سے استعمال کرنے کی کوشش کریں۔

ترک رہنما نے یہ بھی بتایا کہ کوئی بھی ملک یا معاشرہ – خواہ وہ ترقی یافتہ ہو – ڈیجیٹل فاشزم کے تباہ کن اثرات سے پاک نہیں ہے۔

ترک دنیا میں میڈیا ، ٹی وی سیریز اور فلمی شعبوں میں تعاون کے موقعے اور سوشل میڈیا پرغلط معلومات کے خلاف مشترکہ جدوجہد ان موضوعات میں شامل ہیں جن پر فورم کے دوران تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

ترک کونسل 2009 میں ایک بین سرکاری تنظیم کے طور پر قائم کی گئی تھی جس کا بنیادی مقصد ترک زبان بولنے والی ریاستوں کے درمیان جامع تعاون کو فروغ دینا ہے۔ اس میں آذربائیجان ، قازقستان ، کرغیزستان ، ترکی اور ازبکستان رکن ممالک اور ہنگری ایک مبصر ریاست کے طور پر شامل ہیں۔

پچھلا پڑھیں

ورلڈ کپ کے سپر 12 راونڈ کا آغاز ہو گیا

اگلا پڑھیں

ترکی اور آذربائیجان کے مشترکہ میڈیا پلیٹ فارم کا پہلا اجلاس

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے