ozIstanbul

استنبول: روس، یوکرین مذاکرات کامیاب ہوئے تو اناج راہداری کے لیے ‘کنٹرول سینٹر’ قائم کیا جائے گا

ترک وزیر خارجہ میولوت چاوش اولو  نے کہا کہ ترکیہ نے بحیرہ اسود میں اناج کی راہداری کے قیام کے لیے تعمیری کردار ادا کیا ہے۔

ترکیہ کے سرکاری دورے پر دارلحکومت انقرہ میں موجود برطانوی وزیر خارجہ لِز ٹرس سے ملاقات کے بعد وزیر خارجہ  میولود  چاوش اولو نے مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اناج کی راہداری کے بارے میں کہا کہ  ہم  بحیرہ اسود میں اناج کی راہداری کے لیے تعمیری کردار ادا  کررہے ہیں ۔ روس کی جانب سے استنبول میں طے شدہ مذاکرات اگر کامیاب ہوئے تو اناج راہداری کے لیے ‘کنٹرول سینٹر’ قائم کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ وہ روس یا دیگر ممالک کے ذریعہ یوکرینی اناج یا کسی بھی مصنوعات کی غیر قانونی خرید و فروخت کے خلاف ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ ترکیہ ہونے کے ناتے ہم اسے ترکیہ آنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ  اگر کوئی معاہدہ ہوتا ہے تو استنبول میں ایک کنٹرول سنٹر قائم کیا جائے گا اور یوکرین کے علاقائی پانیوں سے بالکل باہر ایک محفوظ زون قائم کیا جائے گا۔

نیٹو کی رکنیت کے لیے سویڈن اور فن لینڈ کی درخواست کا حوالہ دیتے ہوئے، چاوش اولو نے کہا کہ "ہر کسی کے سیکیورٹی خدشات کو دور کیا جانا چاہیے اور ترکیہ کے سیکیورٹی خدشات کو  بھی مدنظر رکھا جانا چاہیے۔

میولوت چاوش اولو نے کہا کہ اگر یہ دونوں ممالک (سویڈن اور فن لینڈ) اتحادی بننا چاہتے ہیں، تو انہیں نیٹو کے اندر سیکیورٹی خدشات کو پورا کرنا ہوگا۔ ہمیں ایک سیشن کا انعقاد  کرنا ہوگا جس میں دہشت گردی پر توجہ مرکوز کی جائے گی  اور  خاص طور پر(29 تا 30 جون ) نیٹو سربراہی اجلاس میں اس پر غور کیا جانا چاہیے۔

برطانوی وزیر ٹرس نے  اس موقع پر کہا کہ  اگر اناج کے مسئلے کو اگلے ماہ تک حل نہ کیا جاسکا  اور    یوکرین کی بندرگاہوں سے اناج کو نہ ہٹایا گیا تو اس سے شدید قحط سالی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ سویڈن اور فن لینڈ کی نیٹو کی رکنیت کے بارے میں، ٹرس  نے کہا کہ ہم نیٹو کے ساتھ بات چیت کریں گے۔ ہمارے خیال میں فن لینڈ اور سویڈن کی نیٹو میں شمولیت ہمارے لیے مضبوطی  اور استحکام  کا باعث ہوگی ۔

پچھلا پڑھیں

ٹوئٹر نے ڈھائی ہزار الفاظ پر مشتعمل نوٹس فیچر کی آزمائیش شروع کر دی

اگلا پڑھیں

افغانستان:طالبان حکومت کی عالمی برادری سے امداد کی اپیل

تبصرہ شامل کریں