جبل النور پر لیزر کی مدد سے قرآن کی پہلی آیت کا سحر انگیز منظر

مکہ مکرمہ میں حرا ثقافتی منصوبے کے زیر اہتمام مسجد الحرام سے تقریبا 4 کلومیٹر شمال مشرق کی جانب واقع جبل النور پر قرآن پاک کی پہلی نازل ہونے والی آیت ” پڑھو اپنے رب کے نام سے جس نے پیدا کیا” کا لیزرلائٹ ڈسپلے کیا گیا ہے۔

حرا ترقیاتی منصوبے پر کام کرنے والی سمایا انوسٹمنٹ کمپنی کی انتظامیہ کی جانب سے جاری کردہ معلومات کے مطابق جبل النور مسلمانوں کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل ہے اور یہ پہاڑ اہم ترین تاریخی اور آثار قدیمہ کے مقامات میں سے ایک ہے۔

تاریخی طور پر اسے کوہ حرا کے نام سے جانا جاتا تھا جس کے بعد اس کا نام جبل النور رکھا گیا جس کے معنی ہیں روشنی پھیلانے والا پہاڑ جس نے پوری دنیا میں دین کی روشنی پھیلا دی۔

مکہ مکرمہ کو دنیا کے باقی تمام شہروں سے ممتاز حیثیت حاصل ہے اور یہ اسلامی تاریخ کے لحاظ سے ایک کھلا میوزیم ہے۔

اس شہر کے گرد ونواح میں پھیلے پہاڑ، وادیاں، چٹانیں اور قبرستان منفرد تاریخ کی نمائندگی کرتے ہیں جو پیغمبراسلام ﷺ اور صحابہ کرام کی لازوال داستانیں سناتے ہیں۔

جبکہ جبل النور پر لیزر لائٹس کے ساتھ قرآن کریم کی ابتدائی آیت نے اس تاریخی مقام کی روحانی جہت کو اجاگر کر دیا ہے جو کہ اس علاقے کے وقار اور تعظیم میں خوبصورت اضافہ ہے۔

مکہ مکرمہ میں دو ثقافتی منصوبوں پر کام کرنے والی سمایا انوسٹمنٹ کمپنی کی جانب سے اس خوبصورت لیزر لائٹ کا اہتمام کیا گیا ہے۔

دو منصوبوں میں جبل النور کے پاس وحی سے متعلق (میوزیم آف ریولیشن) اور دوسرا ہجرت سے متعلق (میوزیم آف مائیگریشن) ہے۔

ان دونوں ثقافتی مراکز کا مقصد یہاں آنے والے زائرین اور عازمین کو قبل از اسلام سے لے کر موجودہ دور تک کی تاریخ کے حوالوں سے پیغمبر اسلام کےمشن سے آشنا کرنا ہے۔

واضح رہے کہ مکہ مکرمہ میں موجود مقدس مقامات کے لیے رائل کمیشن اور دیگر ایجنسیوں کی زیر نگرانی 67 ہزار مربع میٹر سے زائد رقبے پر حرا کلچرل ڈسٹرکٹ کے قیام کے لیے کام کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

Read Previous

پانچواں ٹی20: پاکستان نے انگلینڈ کو 6 رنز سے شکست دے دی

Read Next

دبئی میں مفت روٹی کے لئے شاپنگ مالز میں مشینیں نصب

Leave a Reply