fbpx
ozIstanbul

ترکی میں شرح پیدائش مسلسل کم ہو رہی ہے

ترکی میں شرح پیدائش میں مسلسل کمی آ رہی ہے۔ ترک ادارہ شماریات کے مطابق 2020 میں 11 لاکھ 20 ہزار نوزائیدہ بچوں کی رجسٹریشن ہوئی ہے۔ 2019 میں 11 لاکھ 80 ہزار بچے پیدا ہوئے تھے۔
گذشتہ سال پیدا ہونے والے بچوں میں 51.3 فیصد لڑکے اور 48.7 فیصد لڑکیاں تھیں۔
ترک ادارہ شماریات نے کہا ہے کہ 2020 میں شرح پیدائش 1.76 فیصد رہی جبکہ 2019 میں یہ شرح 1.88 فیصد تھی۔
ترکی میں گذشتہ 20 سال میں شرح پیدائش مسلسل کم ہو رہی ہے۔ 2001 میں شرح پیدائش 2.38 فیصد تھی جو 2020 تک کم ہو کر 1.76 فیصد پر آ گئی ہے۔
ترک ادارہ شماریات کا کہنا ہے کہ یورپین یونین کے 27 ممالک کے مقابلے میں ترکی میں شرح پیدائش ابھی بھی زیادہ ہے۔ 2019 میں فرانس میں سب سے زیادہ شرح پیدائش 1.86 جبکہ مالٹا میں سب سے کم 1.14 فیصد تھی۔
ترکی میں 2001 میں سب سے زیادہ شرح پیدائش 20 سے 24 سال کی عمر کی خواتین میں تھی جو 2020 میں 25 سے 29 سال ہو گئی ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ شرح پیدائش بڑی عمر کی خواتین میں زیادہ ہے بہ نسبت چھوٹی عمر کی خواتین کے۔
ترکی کے صوبہ سنلیوفرا میں شرح پیدائش سب سے زیادہ 3.71 فیصد رہی جبکہ سرناک 3.22 فیصد کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہا۔
بحیرہ اسود کے ساحلی شہر کارابوک میں شرح پیدائش سب سے کم 1.29 فیصد رہی۔
واضح رہے کہ صدر رجب طیب ایردوان کافی عرصے سے نوجوانوں پر زور دے رہے ہیں کہ وہ جلد شادی کریں تاکہ ترکی کی گرتی ہوئی شرح پیدائش کو بہتر بنایا جا سکے۔

پچھلا پڑھیں

ترکی میں 17 روز کے مکمل لاک ڈاون کے بعد وائرس کیسز میں واضح کمی

اگلا پڑھیں

آج ترکی میں 19 مئی کا دن منایا جا رہا ہے، ملک بھر میں عام تعطیل

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے