ozIstanbul

مختلف ممالک میں رمضان کے رسم و رواج

رمضان المبارک مسلمانوں کا مقدس ترین مہینہ ہے ۔ اس کی آمد پر دنیا کے مختلف ممالک میں بسنے والے مسلمان اپنی اپنی ثقافت ،روایات اور رسم و رواج کے مطابق اس کا استقبال کرتے ہیں ۔

دنیا کے مختلف ممالک میں رمضان کے دوران کیا رسم و رواج رائج ہوتے ہیں؟ آئیے ایک نظر دیکھتے ہیں

توپ داغنا

سحر و افظار کاا علان توپ داغنے سے کرنے کی روایت کئی ممالک میں موجود ہے

مصر میں ایک جرمن ملاقاتی نے سلطان سیف الدین کو ایک توپ تحفے کے طور پر پیش کی تو سلطان کے سپاہیوں نے اسکا معائنہ کرنے کے لیے اس توپ کو شام کے وقت چلایا، اس وقت رمضان البارک کا مبارک مہینہ تھا اور اتفاق سے افظاری کا وقت بھی ، توپ کی آواز سے شہریوں نے یہ تصور کیا کہ انہیں افطاری کھولنے کا پیغام دینے کے لیے توپ کا استعمال کیا گیا ہے

جب سپاہیوں کو یہ معلوم ہوا کہ لوگ توپ کی آواز پر افطاری کر رہے تو انہوں نے اسے روز مرہ کا معمول بنا لیا اور ہر روز سحری اور افطاری کا پیغام توپ چلا کر دیا جانے لگا

ترکی کی بلند و بالا پہاڑیوں سے مقررہ وقت پر توپ چلا کر لوگوں کو افظاری و سحری کا پیغام دیا جاتا ہے،

سعودی عرب میں بھی سحری کے وقت توپ چلا کر لوگوں کو پیغام دیا جاتا ہے اور روس کے کچھ حصوں میں بھی اس روایت پر عمل کیا جاتا ہے۔

ڈرم بجانا

سحری کے وقت ڈرم بجا کر لوگوں کو جگانے کی روایت کئی ممالک میں موجود ہے

ترکی میں دور عثمانیہ کا لباس پہنے ڈرمر سحری کے وقت لوگوں کو ڈرم بجا کر جگاتے ہیں،

مراکش میں بھی اس روایت پر عمل کیا جاتا ہے،

پاکستان میں بھی سحری اور افظاری کے وقت ڈرم بجا کر لوگوں سحری کے لیے بیدار کیا جاتا ہے

منادی کرنا

اسلامی روایات کے مطابق مسلمانوں میں سب سے پہلے منادی کرنے والے حضرت بلال حبشی تھے ۔نبی پاک ﷺ نے حضرت بلال کی ذمہ داری لگائی تھی کہ وہ مسلمانوں کو سحری کے لیے بیدار کریں ۔

مکہ المکرمہ میں منادی کروانے والے فانوس اٹھا کر شہر کے مختلف علاقوں میں گھومتے ہیں

سوڈان کی گلیوں میں منادی کے ساتھ ایک بچہ بھی موجود ہوتا ہے جسکے ہاتھ میں اس محلے میں رہنے والوں کے ناموں کی فہرست ہوتی ہے جنہیں باقائدہ نام لے کر سحری کے وقت جگایا جاتاہے

مصر میں بھی ایک شخص گھروں کے باہر کھڑے ہوکر رہائشی کا نام لے کر پکارتا ہے تاکہ وہ سحری کے لیے جاگ جائے اور پھر گلی کے ایک کونے میں کھڑے ہوکر ڈرم کی تھاپ پر حمد پڑھتا ہے

ان لوگوں کی کوئی تنخواہ مقرر نہیں ہوتی مگر لوگ انہیں بطور ہدیہ رمضان کے آخر میں تحائف دیتے ہیں

رمضان خیمے

رمضان المبارک کے آتے ہی سعودیہ عرب میں افطار خیمے لگا دیے جاتے ہیں جہاں مختلف ممالک اور قوموں کے لوگ افطاری کرتے ہیں

اسی طرح کی روایت روس میں بھی موجود ہے روس مفتی کونسل کی جانب سے ماسکو میں اجتماعی افطاری کے لیے رمضان المبارک میں رمضان خیمے لگائے جاتے ہیں

روشنیاں

رمضان المبارک کی آمد پر سعودیہ میں گھروں اور دکانوں کو سجایا جاتا ہے تاکہ رمضان کو خوش آمدید کہا جا سکے
فلسطین میں بھی خاص اہتمام سے گلیوں بازاروں کو روشن کیا جاتا ہے

ترکی میں مسجدوں کو افطار کے وقت روشن کر دیا جاتاہے جو صبح سحری تک روشن رہتی ہیں

پاکستان میں بھی لوگ اپنی گھروں کو صاف ستھرا کرنے اور روشن کرنے کی تیاریاں کرتے ہیں

افطار

ایران میں افطاری کچھ مخصوص اشیاء سے کی جاتی ہے جس میں چائے ، ایک خاص طرح کی روٹی جسے نون کہاجاتا ہے ، پنیر ، مختلف مٹھائیاں ، کھجور اور حلوہ شامل ہے

ملا ئشیا میں لوگ نماز تراویح کے بعد اپنے روایتی کھانوں سے لطف اندوز ہوتے ہیں جس میں چائے بطور خاص شامل رہتی ہے

پاکستان میں افطار کے وقت لوگوں کے لیے مفت افطاری کا اہتمام کیا جاتا ہے

بہت سے مسلم ممالک میں رمضان کے دوران کام کے اوقات کو بھی کم کر دیا جاتا ہے، لوگ اپنے عزیزو اقارب کو افطاری کی دعوت پر بلاتے ہیں اور مل کر ماہ رمضان کی برکتیں سمیٹتے ہیں ۔

پچھلا پڑھیں

ترکی نے جمال خشوگی قتل کیس ریاض منتقل کر دیا

اگلا پڑھیں

پاکستان: سپریم کورٹ نے قومی اسمبلی بحال کر دی، ڈپٹی اسپیکر کی رولنگ مسترد

تبصرہ شامل کریں