ozIstanbul

قصہ ایک وائرل تصویر کا

تحریر : طاہرے گونیش

گو کہ یہ قصہ اب ماضی کا حصہ یعنی قصہ ء پارینہ بن چکا ہے۔ مگر ہمدردی اور نیکی کبھی رائیگاں نہیں جاتی ۔ سو یہ تصویر ایک بار پھر سوشل میڈیا پر گردش کرتی ہمیں یہ سکھاتی ہے کہ برے کاموں کی طرح اچھے کاموں کی گونج بھی باقی رہتی ہے وقت کی فضا میں۔

یہ تصاویر ترکی کے صوبے ‘ ریزے’کی رہنے والی ایک لڑکی ‘حمد و ثناء بلگین’ کی ہیں۔ وہی ریزے جہاں سے طیب اردوان کا بھی تعلق ہے۔ ریزے کا علاقہ بہت دشوار گزار ہے موسم کی شدت کے حوالے سے خاص کر بارش اور برف باری کسی بھی وقت ہو سکتی ہے۔
مارچ 2018 میں حمد و ثناء معمول کے مطابق اپنے خاندانی کاروبار یعنی گلہ بانی میں ہاتھ بٹانے میں مصروف تھیں ۔ بکریوں کا ریوڑ چرانے کی غرض سے باہر لانے والی حمد و ثناء کے وہم و گمان میں نہیں تھا کہ ایک حاملہ بکری بھی ساتھ چل رہی ہے۔ اور عین اسی وقت وہ بچہ جن دے گی جب وہ فارم سے دور ہوں گے بے یار و مددگار۔ مگر شاید امجد اسلام امجد نے درست کہا تھا کہ جھونپڑیوں میں رہنے والے بچے وقت سے پہلے سیانے ہوجاتے ہیں۔

سو اس نے بھی عقل مندی کا مظاہرہ کرتے ہوئے الٹے پیر بھاگ کر اپنے اسکول کا بستہ وغیرہ لا کر اس میں نوزائیدہ بزغالہ اور ماں بکری کو دھیان سے رکھا۔ ایک امانت اپنے۔ وفادار کتے ‘طومی’ کو سونپی اور ایک اپنی پشت پر لاد کر گھر لائی۔ برف سے گزرتے ہوئے اس کے بھائی نے اس منظر کو دیکھا تو کیمرہ نکال لایا اور یہ خوبصورت تصاویر کلک کیں۔ اور بہن کی مدد کو پہنچا۔

وہ خود تو پس منظر میں رہا مگر اچھائی کی اس زنجیر کی ایک کڑی وہ بھی تھا۔
اب حمد و ثناء بڑی ہوچکی ہے مگر اس کا پیغام ‘ محبت ہے جہاں تک پہنچے ‘ ابھی تک گردش کر رہا ہے۔

پچھلا پڑھیں

نیویارک: عمارت میں آتشزدگی سے جاں بحق افراد میں مسلمانوں کی بڑی تعداد

اگلا پڑھیں

پی ایس ایل 7 کی ٹکٹوں کی آ ن لائن فروخت کا آغاز ہوگیا

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے