fbpx
ozIstanbul

فلسطینی سماجی کارکن کی گرفتاری اسرائیل کو بھاری پڑ گئی

فلسطینی سماجی جڑواں کارکنوں کی گرفتاری کے بعد وہ سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئے جسکے باعث اسرائیلی پولیس کو انہیں چھوڑ نا پڑا۔

اسرائیلی پولیس نے اتوار کے روز دو جڑواں بہن بہائیوں کو حراست میں لیا تھا جو مشرقی یروشلم کے پڑوسی شیخ جرح سے فلسطینیوں کی بےدخلی روکنے کی مہم کے چہرے بن چکے ہیں۔

سوشل میڈیا پر جاری ایک فوٹیج میں 23 سالہ مونا ال کورد کو دکھایا گیا جس میں انکے خادان کو یہودی آباد کوروں نے اسرائیلی عدالت کے فیصلے کے بعد شیخ جرہ سے بے دخل کرنے کی کوشش کی گئی۔

ویڈیو میں مزید دکھایا گیا کہ اسرائیلی افسران انکو ہتھکڑی لگا کر گھر سے باہر لے کر جا رہے تھے۔
موال کرد کو گرفتاری کے چنف ہی گھنٹوں بعد رہا کر دیا گیا۔

اسکے والد کا سوشل میڈیا پر کہنا تھا کہ انہیں امید ہے انکے بیٹے کو بھی جلد رہا کر دیا جائے گا جوکہ اب انکی دعاوں سے رہا ہو چکے ہیں۔

مونا ال کرد کا نام لیے بغیر اسرائیلی پولیس کا کہنا تھا کہ شیخ جرح میں ہونے والے فسادات میں 23 سالہ مشتبہ شخص شامل ہے۔

پولیس نے فی الحال ابھی تک مونا کے بھائی محمد کے بارے میں کوئی تنصرہ نہیں کیا تھا۔

دونوں بہن بھائیوں کے حامیوں نے بتایا کہ جڑواں بچوں کی نظر بندی شیخ جارحہ میں انخلا کی مخالفت کو روکنے کے لیے وسیع پیمانے پر اسرائیلی کوششوں کا ایک حصہ ہے۔جہاں اسرائیلی فلسطینیونیوں نکال کر خود وہاں منتقل ہونا چاہتے ہیں۔

پچھلا پڑھیں

ڈبلیو ایچ او: مقبوضہ فلسطین میں 2 لاکھ فلسطینیوں کو طبی امداد کی ضرورت

اگلا پڑھیں

ارطغرل غازی میں مرکزی کردار ادا کرنے والے انگین آلتان کے بیٹے کی سوئمنگ کرتے ہوئے تصاویر وائرل

تبصرہ شامل کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے