نسٹ اسلام آباداور انقرہ سینٹر آف تھاٹ اینڈ ریسرچ کے تعاون سےپاکستان اور ترکیہ کے درمیان مشترکہ کانفرنس کا انعقاد

نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی (نسٹ) اور انقرہ سینٹر آف تھاٹ اینڈ ریسرچ کے تعاون سےپاکستان اور ترکیہ کے درمیان اقتصادی، سماجی اور سیاسی تعلقات پر مشترکہ کانفرنس کا انعقاد ہفتہ کو نسٹ اسلام آباد میں ہوا۔

اقتصادی، مالیاتی، تجارتی اور بین الاقوامی تعاون کے مواقع، ترقی پر اسلامی اقتصادیات اور مالیات کا کرداراور پاکستان اور ترکیہ کے درمیان سماجی اور ثقافتی تعلقات،پاکستان اور ترکیہ کے تعلقات کی تاریخ پر مبنی کانفرنس کے اہم موضوعات تھے۔

نسٹ کے پرو ریکٹر ’’ریسرچ، انوویشن اینڈ کمرشلائزیشن‘‘ ڈاکٹر رضوان ریاض نے مہمانوں کو خوش آمدید کہا اور استقبالیہ کلمات سے کانفرنس کا آغاز کیا۔

انہوں نے ’’ترکیہ ہمارا برادر ملک‘‘ کہہ کر دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی اہمیت کو اُجاگر کیا۔ صدر انقرہ مرکز برائے فکر و تحقیق پروفیسر مہمت بلوت نے کہا کہ حالیہ برسوں میں ترکیہ نے اپنی جغرافیائی سرگرمیاں بڑھا دی ہیں بلکہ ان ممالک کی حیثیت میں بھی جو خطے سے دور ہیں لیکن معاشی طور پر ترقی یافتہ نہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ تاریخی تعلقات اور نئے اقتصادی تعاون کے امکانات کے ساتھ مستقبل کے لیے پاکستان جنوبی ایشیا بالخصوص پاکستان کی موجودہ اقتصادی صورتحال کا تعین کرنے کے لیے جہاں ترکیہ کی نئی خارجہ پالیسی بیانیے سے مطابقت رکھتی ہے۔ پاکستان میں ترکیہ کی ناظم الامور ایسرا سین نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ انقرہ سینٹر آف تھاٹ اینڈ ریسرچ سے وابستہ یونیورسٹیوں کے پاس ایسی پالیسیاں تیار کرنے کے لیے تعلیمی جہت پر وسائل کا ایک اہم ذخیرہ ہوگا جو علاقائی ترقی اور نمو کو متحرک کریں گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان اور ترکیہ کے درمیان دوطرفہ تعلقات کی تشکیل متحدہ ہندوستان کے زمانے سے کی جا سکتی ہے جب پاکستان کی تحریک چل رہی تھی۔

کانفرنس کے مقررین نے ترکیہ اور پاکستان کے درمیان اقتصادی تعاون پر نئی تحقیق کو تحریک دینے اور وسعت کے لیے روڈ میپ فراہم کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ چند سالوں میں ترکیہ اور پاکستان کے مفادات بہت سے اہم معاملات پر ایک دوسرے سے ملنا شروع ہو گئے ہیں۔ نصف صدی سے زیادہ عرصے تک ترکیہ اور پاکستان گہرے دوست رہے۔

ان کے کثیر جہتی تعلقات نے بھائی چارے کا وہی جذبہ ظاہر کیا جو ہندوستانی مسلمانوں اور سلطنت عثمانیہ اور بعد میں جمہوریہ ترکیہ کے درمیان صدیوں پرانے تعلقات کے دوران غالب تھا ، تاہم، نظریاتی طور پروہ ایک دوسرے سے الگ تھے۔ ترکیہ جب جمہوریہ بناتواس نے سیکولرازم کی پیروی کی جب کہ پاکستان اپنی قومیت کے مرکز کے طور پر اسلامی نظریے پر قائم رہا۔

لیکن نظریات کے یہ اختلافات ان کے متعلقہ بیرونی نقطہ نظر پر ان کے مماثل مظاہر کے ساتھ دوستانہ دوطرفہ تعلقات کی راہ میں کبھی رکاوٹ نہیں بنے۔

مستقبل میں امید ہے کہ عالمی رجحانات کو مدنظر رکھتے ہوئے پاکستان اور ترکیہ کے تعلقات میں اقتصادی تعامل مرکزی حیثیت اختیار کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستانی طلباکی بڑی تعداد ترکیہ کی یونیورسٹیوں کے وظائف سے فائدہ اٹھاتی ہے ۔

تاہم پاکستان کے تعلیمی اداروں میں آنے والے ترک طلباکا تناسب بہت کم ہے اور روابط قائم کرنے کے لیے تعلیمی اداروں کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ دونوں اطراف سے ثقافتی گروپوں کے تبادلے کے ساتھ ساتھ سیاحت کی صنعت کو اس سلسلے میں پہل کرنے کی ترغیب دے کر عوام کے دوطرفہ روابط بڑھانے کی بھی ضرورت ہے۔

Read Previous

الجزیرہ ٹی وی سے منسلک فلسطینی خاتون صحافی اسرائیلی فورسز کی فائرنگ سے جاں بحق ہوئیں،اقوام متحدہ

Read Next

نسٹ اورٹکا کے تعاون سے منعقد انقرہ سینٹر آف تھاٹ اینڈ ریسرچ کانفرنس اختتام پذیر

Leave a Reply