turky-urdu-logo

استنبول چرچ پر فائرنگ، پولیس کا گرینڈ آپریشن ، دہشت گرد گرفتار

استنبول چرچ پر حملہ کرنے والے دہشت گرد گرفتار کیے جا چکے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پولیس نے تیس مقامات پر چھاپے مارے اور 47 مشتبہ افراد کو زیرِ حراست لے لیا۔

وزیرِ داخلہ علی یرلی کایا نے پریس کانفرنس کی اور بتایا کہ سینٹ ماریا چرچ میں ہونے والی فائرنگ کے نتیجے میں جاں بحق ہونے والے شہری تونسر سیہان کے قتل میں ملوث دو دہشت گردوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے جن کا تعلق داعش سے ہے۔

وزیرِ داخلہ علی یرلی کایا نے جاں بحق ہونے والے شہری کے خاندان اور رشتہ داروں سے اظہارِ افسوس کرتے ہوئے کہا کہ میں ایک دفعہ پھر متاثرہ خاندان کے ساتھ اظہارِ افسوس کرتا ہوں اور ہم گرفتار دہشت گردوں کو کیفرِ کردار تک پہنچائیں گے۔

انہوں نے پولیس کو خراجِ تحسین پیش کیا اوران کی کاوشوں کو سراہا۔

وزیرِ داخلہ علی یرلی کایا نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے واضح کیا کہ گرفتار دہشت گردوں میں سے ایک کا تعلق تاجکستان جبکہ دوسرے کا تعلق روس سے ہے اور اس تمام واقعے پر تحقیقات جاری ہیں ۔

انہوں نے مزید کہا کہ جو بھی ہمارے ملک اور قوم کی سالمیت پر حملہ کرنے کی کوشش کرےگا اسے اس کے بھیانک انجام پر پہنچایا جائے گا۔

ڈائریکٹر آف کمیونیکیشن فرحتین التن کے مطابق صدر ایردوان نے چرچ میں خدمات انجام دینے والے فادر انتون بلائی سے فون پر بات چیت کی اور اس واقعے پر افسوس کا اظہار کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہمارے قانون نافذ کرنے والے ادارے اس وقت اپنی تمام تر صلاحیتوں کے ساتھ متحرک ہیں اور جلد ہی مجرمان کو کیفرِ کردار تک پہنچایا جائے گا۔”

Alkhidmat

Read Previous

صدر ایردوان اور نیٹو کے سیکرٹری جنرل کا ٹیلی فونک رابطہ،  ترکیہ کی طرف سے سویڈن کی نیٹو کی رکنیت کی منظوری پر تبادلہ خیال

Read Next

ترک انٹیلی جنس چیف کا دورہ عراق

Leave a Reply